44

کراچی والوں کیلئے بڑی خوش خبری۔ سپریم کورٹ کاایک ماہ میں سرکلر ریلوے چلانے کا حکم

  کراچی میں دو ہفتے کے اندر ریلوے اراضی سے تجاوزات ختم کرکے ایک ماہ میں سرکلر اور لوکل ٹرین چلائے جائیں ۔ سپریم کورٹ

سپریم کورٹ کراچی رجسٹری میں تجاوزات کے خاتمے اور کراچی بحالی کیس کی سماعت کےموقع پر سپریم کورٹ نے سیکریٹری ریلوے کو 10 ایکڑ ریلوے کی زمین سے ہر حال میں دو ہفتے کے اندر تجاوزات ختم کرنے کی ہدایت کردی جبکہ ایک ماہ کے اندر سرکلر اور لوکل ٹرین چلانے کے حکم بھی دیا۔ جسٹس گلزارنے سیکریٹری ریلوے کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ آپ کو معلوم نہیں ہمارا حکم کیا تھا؟ اس پر عمل درآمد کیوں نہیں ہوا۔ سیکریٹری ریلوے نے جواب دیا کہ ریلوے کی زمین پر ہزاروں گھر بن چکے ہیں۔ اُنہیں گرانا ہوگا۔ عدالت نے کہا، کچھ بھی کریں، گھرگرائیں۔ اگر قبضہ مافیا کے پاس ہر قسم کا اسلحہ ہے تو ہمارے پاس فوج اور رینجرز ہے، انہیں استعمال کریں۔

عدالت نے چیف سیکریٹری کو میئرکراچی اور دیگرحکام کے ساتھ مل کر آپریشن کا حکم دیتے ہوئے کہا کہ متاثرین کو وفاق، سندھ حکومت اور میئر کراچی متبادل جگہ فراہم کریں

پریم کورٹ نے آئندہ سماعت میں آئی جی سندھ، ڈی جی رینجرز کو ذاتی حیثیت میں طلب کرلیا ہے۔عدالت نے ہدایت کی ہے کہ دونوں افسران دفاتر چوکیوں اور بیریئرز سے متعلق رپورٹ پیش کریں۔ عدالت نے راشد منہاس روڈ پر متصل 80 ایکڑ زمین پر قبضہ کے معاملے کا نوٹس لیا اور سندھ بلڈنگ کنٹرول اتھارٹی اور دیگر اداروں کو فوری تعمیرات روکنے کا حکم دے دیا۔عدالت نے چیف سیکریٹری کو میئر کراچی اور دیگر حکام کے ساتھ مل کر آپریشن کرنے کا حکم بھی دیا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں