Coronavirus 54

دنیا کے کورونا وائرس سے محفوظ ممالک

دوافریقی ممالک

برآعظم افریقہ کے دوممالک اب بھی کرونا وائرس سے محفوظ ہیں جن میں سے ایک ملک کمروز اور دوسرا ملک لیسوتھو ہے۔

ممکنہ طور پر ان دونوں کی جغرافیائی پوزیشن اور نہ ہونے کے برابر غیرملکی سیاحوں کی آمد اس کی وجوہات ہیں۔

لیسوتھو میں کوئی کیس تو سامنے نہیں آیا مگر مارچ میں وہاں لاک ڈائون کردیا گیا تھا، تاہم اب یہ ملک سیاسی بحران کی زد میں ہے، کیونکہ وزیراعظم ٹام تھومس تھبانے کے خلاف پولیس کی جانب سے ایک قتل کی تحقیقات کے بعد وزیراعظم نے فوج کو تعینات کر دیا تھا۔

کمروز میں عالمی ادارہ صحت کافی متحرک ہے اور جنوری سے ملک میں آنے والے افراد میں وائرس کی علامات چیک کرنے میں معاونت کررہا ہے، جبکہ مارچ میں وہاں ایونٹس اور لوگوں کے اجتماعات پر پابندیاں عائد کی گئی تھیں۔

بحراوقیانوس کے جزائر پر مشتمل 10 ممالک

وائرس سے محفوظ 15 میں سے 10 ممالک یا خطے بحراوقیانوس کے جزائر پر مشتمل چھوٹے مماللک ہیں، جن میں کیریباتی، جزائر مارشل، مائیکرونیشیا، ناورو، پلائو، سامووا، جزائر سلیمان، ٹونگا، تووالو اور وانواتو شامل ہیں۔

ان تمام ممالک میں کورونا سے بچنے کے لیے لاک ڈائون کا نفاذ کیا گیا اور وبا سے متاثرہ ممالک سے داخلے پر پابندی عائد کی گئی۔

مائیکرونیشیا، وانواتو ، کیریباتی ور ٹونگا میں ایمرجنسی کا نفاذ، سرگرمیوں پر پابندی اور سرحدوں کو بند کیا گیا۔

جزائر سلیمان ان اولین ممالک میں سے ایک ہے جس نے متاثرہ ممالک کے شہریوں کے داخلے پر پابندی عائد کی۔

تین ایشیائی ممالک
شمالی کوریا، ترکمانستان اور تاجکستان ایشیا کے وہ 3 ممالک ہیں جہاں اب تک کورونا وائرس کے کسی کیس کی تصدیق نہیں ہوئی۔

چین کا پڑوسی ملک شمالی کوریا اس وبا سے سب سے پہلے متاثر ہوا جبکہ کوریا کے ارگرد کے تمام ممالک میں بھی وائرس کے کیسز سامنے آچکے ہیں مگر وہاں نظام صحت ناقص ہونے کے باوجود اس ملک کا کہنا ہے کہ وہ اب بھی کورونا وائرس سے محفوظ ہے،

اسی طرح وسط ایشیائی ممالک تاجکستان اور ترکمانستان دنیا سے کافی الگ تھلگ رہنے والے ممالک ہیں جہاں بہت کم سیاح آتے ہیں جبکہ وہاں سنسرشپ بھی کافی سخت ہے۔

ترکمانستان کی سرحد ایران سے ملتی ہے جو اس وبا سے متاثر ہونے والے چند بڑے ممالک میں سے ایک ہے اور وہاں بلکہ لفظ کورونا کے استعمال پر ہی پابندی عائد کی جاچکی ہے،

اسی طرح تاجکستان میں بھی صحافیوں پر بہت زیادہ پابندی ہے تو آزادانہ اطلاعات کی فراہمی بہت مشکل ہے

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں